امام صادق علیه السلام : اگر من زمان او (حضرت مهدی علیه السلام ) را درک کنم ، در تمام زندگی و حیاتم به او خدمت می کنم.
کیا امام زمانہ عجل اللہ فرجہ الشریف کے ظہور میں تعجیل کے لئے دعا کرنا امام زمانہ ارواحنا فداه کے اس جملہ «وأما ظهور الفرج فإنّه إلی الله» سے منافات نہیں رکھتا؟

سوال:

کیا امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کے ظہور  میں تعجیل  کے  لئے دعا  کرنا امام زمانہ ارواحنا فداه کے  اس  جملہ «وأما ظهور الفرج فإنّه إلی الله» سے  منافات  نہیں  رکھتا؟

جواب:

امام  زمانہ  عجل اللہ  فرجہ  الشریف  کی  توقیع  مبارک  میں  صادر  ہوا  ہے: «واکثروا الدعاء بتعجیل الفرج، فإن ذلک فرجکم» (الإحتجاج : 2 / 471) آپ  نے  یہ  حکم دیا  ہے  کہ  آنحضرت  کے  ظہور  میں  تعجیل  کے  لئے  زیادہ  دعا  کریں ۔ اسی  طرح  اہلبیت  اطہار  علیہم  السلام  سے  وارد  ہونے  والی  دعاوٴں  میں  ان  بزرگ  ہستیوں  نے  امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کے  لئے  دعا  کرنے  کی  تاکید  کی  ہے۔

ان  تمام  دعاوٴں  میں  ہم  خدا  سے امام زمانہ عجل الله تعالی فرجه الشریف  کے  ظہور  میں  تعجیل  کی  دعا  کرتے  ہیں  نہ کہ امام  زمانہ  ارواحنا  فداہ  سے۔اور  ہم  یہ  کہتے  ہیں: اللهم عجل لولیک الفرج.

خداوندا! اپنے  ولی  کے  ظہور  میں  تعجیل فرما۔

کیونکہ  ان  دعاوٴں  میں  ہماری  درخواست  خدا  سے  ہے  نہ  کہ  امام  زمانہ ارواحنا  فداہ  کی  ذات  مقدسہ  سے۔اور  یہ  اس سخن سے  کوئی  منافات  نہیں  رکھتا: «وأما ظهور الفرج فإنّه إلی الله» (الإحتجاج : 2 / 470)

کیونکہ اس  فرمان  کی  رو  سے  امام  زمانہ ارواحنا  فداہ  کا  ظہور  خدائے  مہربان  سے  مربوط  ہے  اور  ہم  بھی  اپنی  دعاوٴں  میں  خدا  سے  یہی  درخواست  و  التجا  کرتے  ہیں  کہ  خدایا! ظہور  امام  زمانہ  ارواحنا  فداہ  میں  تعجیل  فرما۔

 

بازدید : 4440
بازديد امروز : 2876
بازديد ديروز : 3004
بازديد کل : 87529195
بازديد کل : 68324421