امام صادق علیه السلام : اگر من زمان او (حضرت مهدی علیه السلام ) را درک کنم ، در تمام زندگی و حیاتم به او خدمت می کنم.
دعائے غیبت کے اس جملہ (وصبّرنی علی ذلک حتی لا احبّ تعجیل ما اخّرت ولا تأخیر ما عجّلت) کی رو سے ظہور میں تعجیل کے لئے دعا کرنے میں منافات ہیں یا نہیں؟

سوال:

دعائے  غیبت  کے  اس  جملہ  (وصبّرنی علی ذلک حتی لا احبّ تعجیل ما اخّرت ولا تأخیر ما عجّلت) کی  رو  سے  ظہور  میں  تعجیل  کے  لئے  دعا  کرنے  میں  منافات  ہیں  یا  نہیں؟

جواب:

دعائے  غیبت میں  منقول  جملہ سے  امام  زمانہ  ارواحنا فداه کے  لئے  دعا  کرنے  میں  کوئی  منافات  نہیں  ہے  کہ  جب  ظہور  میں  تعجیل  کے  لئے  دعا  کے  معنی  پر  ہماری  توجہ  ہو۔

اس  کی  مزید  وضاحت  کے لئے  ہم  کہتے  ہیں:

جو امام زمانہ ارواحنا فداه کے  ظہور  میں  تعجیل  کے  لئے  دعا کرتا  ہے،دعا  کرنے  سے  اس  کا  مقصد  ان  دو  چیزوں  میں  سے  ایک  ہو  سکتا  ہے:

 1 – خدایا! امام زمانہ ارواحنا  فداہ  کا  جلد  ظہور فرما  اگرچہ  اس کی  شرائط فراہم نہ  ہوں ۔

2 – خداوندا! امام  زماہ  ارواحنا  فداہ  کا  ظہور  فرما  اور  ظہور  کی  شرائط  کو  فراہم  فرما۔

اگر دعا  کرنے  والے  کا  مقصد  پہلی  قسم  ہو  یعنی  وہ  مائل  ہے  کہ  آنحضرت  ظہور  فرمائیں  اور  وہ  ان  کی  خدمت  میں  شرفیاب  ہو، ان  کا  دیدار  کرے  اگرچہ  ظہور  کی  شرائط  ابھی  تک  فراہم  نہ  ہو۔اسے شرائط  کے  بغیر ایسے  ظہور  کے  آثار  و  نتائج  سے  کوئی  سروکار  نہیں  ہے  کیونکہ  ممکن  ہے  یہ  آنحضرت  کی  شہادت  کا  باعث  بنے ۔  حقیقت  میں  اسے  خود  ظہور  میں  تعجیل  کی  جلدی  ہے  نہ  کہ  وہ  خدا  سے دعا  کر  رہا  ہے  ظہور  کے  اسباب  و  شرائط  کی  فراہمی  کے  ساتھ  آنحضرت  کے  ظہور  میں  تعجیل  فرما۔

یہ  واضح  ہے  کہ  اگر  کوئی  ایسے  ظہور  میں  تعجیل  کے  لئے  دعا  کرتا  ہے  تو  یہ  صحیح  نہیں  ہے  اور  اس  کا  نجام  ہلاکت  و  گمراہی  ہو  گااور  وہ  بھی «هلک المستعجلون» میں  شامل  ہو  جائے  گا.

اس بناء  پرایسی  دعا  و  عجلت  انسان  کی  نفسانی  تمایلات  کا  نتیجہ  ہے  نہ  کہ مشیت  الٰہی  کا  تقاضا۔

اور  یہ  اس  جملہ «وصبّرنی علی ذلک حتی لا احبّ...» (جمال الاسبوع : 315) سے  منافات  رکھتی  ہے.

دوسری  قسم: اگر دعا کرنے  والا خداوند  متعال  سے  یہ  دعا  کرے  کہ ظهور امام زمانہ ارواحنا فداه میں  تعجیل  فرما  یعنی  خدا  اپنی لامتناہی  قدرت سے  آنحضرت  کے  ظہور  کی  شرائط  فراہم  فرما۔  ظہور  میں  تعجیل  کے  لئے ایسی  دعا  دعائے  غیبت  کے  جملہ  کے  ساتھ  کسی  قسم  کی  منافات  نہیں  رکھتی۔

کیونکہ  دعا  کرنے  خدا  سےظہور  میں  تعجیل  کی  دعاکررہا  ہے  کہ  خدایا  ظہور  کی  شرائط  فراہم  فرما۔اور  یہ  واضح  سی  بات  کہ  ایسے  ظہور  میں  تعجیل  کہ  جس  میں  شرائط  ظہور  پائی  جاتی  ہو،اس  میں  خدا  کی  رضائیت  ھی  شامل  ہوتی  ہے۔خداوند  نے  فرمایا  ہے: «... فقل انما الغیب لله فانتظروا انی معکم من المنتظرین» (سورۀ یونس ، آیۀ 20) .

پس اگرغیبت  طولانی  ہوگئی  ہے  اور  ظہور  میں تأخیر ہو  رہی  ہے  تو  خداوند کی  طرف  سے ظہور  میں  تعجیل  کی  بجائے  تأخیراس  وجہ  سے  ہے  کہ  ابھی  تک  ظہور  کے  اسباب  و  عوامل  فراہم  نہیں  ہوئےاور  لوگ  ظهور  میں  تعجیل   یا  امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کے  ۳۱۳  خاص  اصحاب  کے مکمل  ہونے   یا  خود  سازی  اورظہور  کے  دیگراسباب  و  علل  کی  فراہمی   کے   لئے  عمومی  دعا  نہیں  کرتے۔لیکن  اگر  لوگ  ظہور  امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  میں  تعجیل  کے  لئے  دعا  کریں  کہ  جو  ظہور  کو  فراہم  کرنے  کا  ایک  ذریعہ  ہے  تو  نہ  صرف  اس  سے  ظہور  میں  تاٴخیر  نہیں  ہوگی    بلکہ  یہ  ایک  بہت  اہم  ذمہ  داری   کی ادائیگی بھی  ہے۔کیونکہ  وہ  خدا  سے  یہ  دعا  کرتے  ہیں  کہ  خدائے  بے  نیاز  اور  صاحب  قدرت  کہ  جو  ظہور  کے  اسباب  فراہم  کر  سکتا  ہے  وہ  ظہور  میں  تعجیل  بھی  فرما  سکتا  ہے۔اور  خدا  سے  یہ  دعا  نہیں  کی  گئی  کہ   اس  ظہور  میں  تعجیل  فرما  کہ  جو  تیری  رضائیت  کے  برخلاف  ہے  اور  جو بغیر  علل  و  اسباب  کے  ہے۔

اس  بناء  پر  خدا  نے کبھی  بھی  ایسے  ظہور  میں  تاٴخیر  نہیں  فرمائی کہ  جس  کے  اسباب  فراہم   ہوں   اورخدا  کی  رضائیت  کے  ساتھ ظہور  کے  لئے دعا  کرنے  والوں  کی  دعا   ظہور  میں  تاٴخیر  کے  ساتھ  منافات  نہیں  رکھتی ۔ اور  جب  ظہور  میں  تعجیل  کے  لئے  دعا  کرنے  والوں  کی  مراد  ایسا  ظہور  ہو  کہ  جس  کے  اسباب  خداوند  فراہم  فرمائے  تو  یہ  تعجیل  ظہور  میں  خدا  کی  رضائیت  کے  ساتھ  بھی  کسی  قسم  کی  منافات  نہیں  رکھتا۔

درحقیقت  دعا  ایسے  امور  کے  بارے  میں  ایک  بہت  اہم  تبصرہ  ہے  کہ  جسے  خدا  نے  مقدر  کیا  ہے  یعنی  جیسا  کہ  فرمایا  گیا  ہے:

إنّ الدعاء یردَ القضاء ولوم ابرم ابراما.

دعا خداوند  الٰہی  کو  رد  کر  دیتی  ہے  اگرچہ  وہ  حتمی  و  یقینی  ہو۔

اگرکسی  کے فقر یا مرض میں  خدا  کی  رضائیت  ہو  اور  فقر  و  مرض  میں  ہی  اس  کی  بھلائی  ہو  تو  خداوند  اس  راہ  کو  اس  کے  لئے  اسے  پلٹا  دیتا  ہے  کہ  وہ  دعا  و  الحاح  کے  ذریعہ  خدا  کی  رضائیت  کو  جلب  کرنے  اور  فقر  و  مرض  سے  نجات  پانے  کی  صلاحیت  پیدا  کر  سکے۔

یعنی  اگرخدا  کی  مشیت  یہ  ہو  کہ  ظہور  امام  زمانہ  ارواحنا  فداہ  میں  تاٴخیر  ہو  تو  خدا  نے  لوگوں  کے  لئے  اس  راہ  کو  پلٹا  دیا  ہے  کہ  وہ  ظہور  میں  تعجیل  کے  لئے  دعا  کرکے  رضائیت    پروردگارکو  حاصل  کریں  اور  تا  کہ خداوند کی  مشیت امام زمانہ عجّل الله تعالی فرجه  الشریف  میں  ظہور  میں  تعجیل  ہو  جائے

 

بازدید : 4674
بازديد امروز : 2734
بازديد ديروز : 3004
بازديد کل : 87528911
بازديد کل : 68324279