امام صادق علیه السلام : اگر من زمان او (حضرت مهدی علیه السلام ) را درک کنم ، در تمام زندگی و حیاتم به او خدمت می کنم.
کیا زمانہٴ ظهور ظالم و ستمگر نیست و نابود ہو جائیں گے اور کسی قسم کو کوئی ظلم و ستم باقی نہیں رہے گا؟

کیا زمانہٴ ظهور  ظالم  و  ستمگر  نیست  و  نابود ہو  جائیں  گے

  اور  کسی  قسم  کو  کوئی  ظلم  و  ستم  باقی  نہیں  رہے  گا؟

 کچھ  لوگ  یہ  گمان  کرتے  ہیں  کہ ظہور  کے  زمانے  میں  ظلم  و  ستم  مکمل  طور  پر  ختم  نہیں  ہو  گااور  اس  زمانے  میں  بھی  ظالم  و  ستمگر  موجود  ہوں  گے۔ان  کا  یہ  خیال  ہے  کہ  اس  زمانے  میں  ظلم  اور ظالم  کی  جگہ   عدل  و  عادل لے  لیں  گے۔یعنی  جس  طرح  غیبت  کے  زمانے  میں  ہر  طرف  ظلم  و  جورہےاور  ظالموں  کا  بول  بالاہے لیکن  اس  کے  باوجود  عادل  افراد  بھی پائے  جاتے  ہیں  کہ  جو  عملی  طور  پر  عادل  ہیں۔زمانہٴ  ظہور  میں عدل  و  عدالت  ،ظلم  و  ظالم  کی  جگہ  لے  لے  گی  اور پھر  عدالت  کا  بول  بالا  ہو  گالیکن  اس  زمانے  میں  بھی  دنیا  کے  گوشہ  و  کنار  میں  ظالم  افراد  بھی  ہوں  گے  کہ  جو ظلم  و  ستم کریں  گے۔

ان کے  اس  عقیدہ  کی  بنیاد  یہ  روایت  ہے  کہ  جسے  وہ  صحیح  طور  پر  نہیں  سمجھ  سکے:

أنَه یملأ الأرض قسطاً وعدلاً کما ملئت ظماً وجوراً.

امام زمانہ عجل الله تعالی فرجه دنیا  کو  عدل  و  انصاف  سے  بھر  دیں  گے  کہ  جس  طرح  وہ  ظلم  و  جور  سے  بھری  ہو  گی۔

وہ  کہتے  ہیں : روایت میں لفظ «کما» کے  معنی «جس  طرح» ہیں  کہ  جو  ان  کے  عقیدہ  کے  صحیح  ہونے  پر  دلالت  کرتا  ہے۔چونکہ زمانہٴ غیبت  میں  اگرچہ دنیا  ظلم  و  ستم  سے  بھری  ہوئی  ہے  لیکن  کسی گوشہ  وکنار  میں تھوڑا  بہت  عدل  و  عدالت  بھی ہے۔ان  کی  دلیل  ہے  کہ «کما» یا «جس  طرح» کی  رو  سے عصر ظهور میں  دنیا  میں  عدالت کا  بول  بالا  ہوگا  لیکن  دنیا  کے  کسی  گوشہ  میں  ظالم  و  ستمگر  لوگوں  پر  ظلم  بھی  کریں  گے۔

جواب :

ہم  اس  شبہہ  کے  جواب  میں  کہتے  ہیں:انہوں  نے  اس  روایت  سے  جو  کچھ  سمجھا  اور  اخذ  کیا  ہے  وہ  صحیح  نہیں  ہے اور  یہ  دوسری  روایات    و  آیات  کے  مخالف  ہے۔

توضیح و  وضاحت : قرآن  کریم  میں  لفظ «کما» بے  شمار  موارد  میں  تشبیہ  کے  لئے  آیا  ہے  اور  کبھی  بھی  یہ  ضروری  نہیں  ہے  کہ «کما» کے  بعد  وارد  ہونے  والے  موارد  ہر  لحاظ  سے  اس  سے  پہلے  والے  موارد  کی  طرح  ہوں۔

خداوند  کریم سورۀ نساء میں فرماتا  ہے:

إنّا أوحینا إلیک کما أوحینا إلی نوح والنبیین من بعده.... (سورۀ نساء، آیۀ 163)

ہم  نے  تم  پر  وحی  کی  جس  طرح  ہم  نے  نوح  پر  وحی  کی  تھی  اور  ان  کے  بعد  کے  پیغمبروں  پر....

اس  آیت  میں  خداوند  کریم  کی مراد  و  مقصود  اصل  وحی  میں  شباہت  ہے  نہ یہ  کہ  خدا  نے  جو  کچھ  حضرت  نوح  اور  ان  کے  بعد  والے  پیغمبروں  پر  وحی  کی  تھی  وہی پیامبر اکرم صلی الله علیه وآله  وسلم  پر  وحی  فرمائی ۔اگر  ایسا  ہوتا  تو  وہی  وحی  نازل  فرماتا۔اس  صورت  میں  قرآن  کو  دوسری  آسمانی  کتابوں  پر  کیا  فوقیت  حاصل  ہوتی؟!

مذکورہ  روایت  سے  یہ  مراد  ہے  کہ  اگرچہ  غیبت  کے  زمانے  میں  دنیا  ظلم  و  ستم  سے بھری  ہے  لیکن  زمانہٴ  ظہور  میں  عدالت  سے  بھری  ہوگی۔یہاں  شبہات  صرف  بھرے  ہونے  کے  اعتبار  سے  ہے  نہ  کہ  غیبت  اور  ظہور  کے  زمانے  میں  ظلم  و  عدالت  مکمل  طورایک  جتنی  ہونی  چاہئے ۔

دوسرے  مورد  میں  خداوند  کریم  فرماتا  ہے:

یا بنی آدم لایفتننّکم الشیطان کما أخرج أبویکم من الجنّة ینزع عنهما لباسهما یریهما سوأتهما. (سورۀ اعراف ، آیۀ 27)

اے  بنی  آدم؛ شیطان تمہیں  فریب  نہ  دے  جیسا  کہ  اس  نے  تمہارے  والدین  کو  جنت  سے  نکال  دیا۔۔۔

کیا  اس  آیت  میں «کما» سے  پہلے  والا  مورد  بالکل  بعد  والے  مورد  کی  طرح  ہونا  چاہءے۔یعنی جسے  بھی  شیطان  فریب  و  دھوکا  دے  وہ حضرت آدم و حوا کی  طرح  جنت  سے  نکالا  جائے  گا  اور  شیطان  اس  کے  بدن  سے  لباس اتار  کر  اسے  برہنہ  کر  دے  گا۔

یہ  واضح  سی  بات  ہے  کہ  اس  آیت  میں  شیطان  سے  دھوکا  کھانے  کو  تشبیہ  قرار  دیا  گیا  ہے کہ  حضرت آدم و حوّا کی  تمام  خصوصیات سے  بھی  تشبیہ  دی   گئی  ہے۔

اگر غور  و  فکر  اور  تاٴمل  و  تفکر  و  تدبر  کے  بغیر  روایات  بیان ہوں  اور  زمانہٴ  ظہور  کی  اہمیت  کو  کم  کیا  جائے  توپھر  آہستہ  آہستہ  آیات  کی  نوبت  آجائے گی  اور  پھر  جس  طرح  روایت  کا  معنی  بیان  کیا  جاتا  ہے  اسی  طرح قرآن  کی  آیات  کا  بھی  معنی  یان  کیا  جائے  گا۔

خداوند  متعال  فرماتا  ہے:

وعد الله الذین آمنوا منکم وعملوا الصالحات لیستخلفنّهم فی الأرض کما استخلف الذین من قبلهم ... (سورۀ  نور  ، آیۀ 55)

اللہ نے تم میں سے صاحبان ہایمان و عمل صالح سے وعدہ کیا ہے کہ انہیں روئے زمین میں اسی طرح اپنا خلیفہ بنائے گا جس طرح پہلے والوں کو بنایا ہے۔۔۔۔

  تفسیر  میں  وارد  ہونے  والی  روایت  کی  رو   سے  یہ  آیت امام  زمانہ  ارواحنا  فداہ  کی  حکومت  کے  بارے  میں  ہے۔ اگر  اس  کا  معنی  بھی  اسی  طرح  سے  کیا  جائے کہ  جس  طرح  پہلے  والی  بعض  روایات کا  معنی  بیان  کیا  گیا  تو  اس  کا  معنی  یہ  ہو  گا  کہ زمانہٴ  ظہور  میں  امام  زمانہ عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کی  حکومت  و  جانشینی پہلے  والی  الٰہی  حکومت  جیسے حضرت  سلیمان  کی  حکومت  کی مانند  ہو  گی۔حالانکہ  اس  آیت  میں امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کی  اصل  خلافت  کو  پہلے  والوں  کی  الٰہی  حکومت  سے  تشبیہ  دی  گئی  ہے  نہ  کہ  ان  کی  تمام  خصوصیات  سے۔  اگر  ایسا  ہوتا  تو  پھر  اسے  امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کی  الٰہی  حکومت  کو  دوسری  حکومتوں  پر  کیا  فوقیت  ہوتی؟

اس  کے  علاوہ  اگر  اس  آیت  کا  مذکورہ  روایت  کی  طرح  غلط  معنی  کیا  جائے تو  پھر  ہمیں  امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کی  حکومت  کی  خصوصیات  کے  متعلق  سینکڑوں  روایات  سے  دستبردار  ہونا  پڑے گا۔

اس  بناپرعرب  ادبیات  میں غیبت   اور  ظہور  کے  زمانے  میں  نسبی  ظلم  و  جور  اور  نسبی  عدل  و  انصاف  میں  منافات  ہے  اور  یہ  قرآن کریم  کے  بھی  مخالف  ہے۔

اس  مطلب (یعنی یہ  کہ  ظہور  کے  زمانے  میں  عدل  و  انصاف  نسبی  نہیں  ہے  بلکہ پوری  دنیا  پر  چھا  جائے  گا) کو  ثابت  کرنے  کی  دوسری  دلیل روایت  ہے  کہ  جس  میں  یہ  وضاحت  کی  گئی  ہے  کہ  زمانہٴ  ظہور  میں  ظلم  کا  نام  و  نشان  نہیں  ہوگا  اور  پوری  دنیا  میں  عدل  و  انصاف  کا  بول  بالا  ہو  گا۔

اس  بارے  میں  مزید  جاننے  کے  لئے کتاب « امام مہدی  کی  آفاقی  حکومت عجل الله تعالی فرجه الشریف» کی  طرف  رجوع  کریں.

 

 

بازدید : 4551
بازديد امروز : 2993
بازديد ديروز : 3004
بازديد کل : 87529429
بازديد کل : 68324538