امام صادق علیه السلام : اگر من زمان او (حضرت مهدی علیه السلام ) را درک کنم ، در تمام زندگی و حیاتم به او خدمت می کنم.
امام حسین علیه السلام کی مجالس عزا کو برپا کرنا

امام حسین علیه السلام  کی  مجالس  عزا  کو  برپا  کرنا

حضرت امام حسین علیه السلام کی  شہادت  کو  یوں  تو  کئی  صدیاں  گذر  چکی  ہیں  لیکن  اس  کے  باوجود  آج  بھی  لوگوں  کے  دلوں امام حسین علیه السلام کی  شہادت  کا  غم  تازہ  ہے  اور  محرم  الحرام  کے  آتے  ہی  نہ  صرف  پوری  دنیا  میں  امام  حسین  علیہ  السلام  کی  مجالس  عزا  برپا  ہوتی  ہیں  بلکہ  ہر  سال  ان  میں  مزید  اضافہ  ہوتا  چلا  جاتا  ہے  اور  روز  بروز  لوگ  ان  مجالس  میں  زیادہ  جوش  و  خروش  اور  شوق  سے  شریک  ہوتے  ہیں۔

امام  حسین  علیہ  السلام  کی  مجالس  میں  صرف  شیعہ  ہی  نہیں  بلکہ  اہلسنت حتی کہ  دوسرے  مذاہب  سے  تعلق  رکھنے  والے  افراد  بھی  شریک  ہوتے  ہیں  اور  یوں  امام  حسین  علیہ  السلام  سے  اپنی  عقیدت  و  محبت  کا  اظہار  کرتے  ہیں۔ان  مجالس  میں  رونما  ہونے  والے  معجزات  اور  پہنچنے  والے  فیض  کی  بدولت  لوگوں  میں  ان  مجالس  میں  شریک  ہونے  کے  رجحان  میں  تیزی  سے  اضافہ  ہو  رہا  ہے۔پاکستان، ایران، عراق  اور  دوسے  ممالک  میں  کتابوں  کی  اشاعت اور  دوسرے  ذرا ئع  ابلاغ   کے  ذریعہ اس  بارے  میں  مفید  اور  موٴثر  موضاعات  پر  روشنی  ڈالی  جاتی  ہے  جس  کہ  وجہ  سے  امام  حسین  علیہ  السلام  کی  مجالس عزا میں شریک  ہونے  والوں  کی  تعداد  میں  اضافہ  ہو  رہاہے۔

لوگ  امام  حسین  علیہ  السلام  کی  عظمت،واقعہٴ  کربلا  کی  اہمیت  سے  آگاہ  ہونے  کی  وجہ  سے  بھی  مجالس  و  محافل  میں  زیادہ  سے  زیادہ  شریک  ہوتے  ہیں۔

لوگوں  کا  امام  حسین  علیہ  السلام  کی  مجالس  میں شریک  ہونا  مسلمانوں  کا  رسول  اکرم  صلی  اللہ  علیہ  و  آلہ  وسلم کی  اس  اہم  ترین  حدیث  پر  عمل  پیرا  ہونے  کا  ایک  نمونہ  ہے  کہ  جسے  بزرگ  شیعہ  اور  اہلسنت  علماء  نے  اپنی  کتابوں  میں ذکر  کیا  ہےکہ  رسول  اکرم صلی  اللہ  علیہ  و  آلہ  وسلم  کا  ارشاد گرامی  ہے  :

إنّی تارک فیکم الثقلین کتاب الله و عترتی

میں  تم  میں  دو  گرانقدر  چیزیں  چھوڑے  جا  رہا  ہوں، کتاب  خدا  یعنی  قرآن  مجید  اور  اپنی  عترت  یعنی  اہلبیت  اطہار  علیہم  السلام.

پیغمبر اکرم صلّی الله علیه وآله کی  امت اور  آنحضرت  کے  احکامات  اور  سنے  کا  پیروکار  سمجھنے  والے  مسلمان  کس  طرح  رسول  اکرم  صلی  اللہ  علیہ  و  آلہ  وسلم کی  اس  اہم  ترین  حدیث(کہ  جسے  تمام  شیعہ  اور  اہلسنت  علماء  قبول  کرتے  ہیں)کو  جانتے  ہوئے  امام  حسین  علیہ  السلام  (جو  سبط  پیغمبر صلی  اللہ  علیہ  و  آلہ  وسلم  اور  عترت  رسول  صلی  اللہ  علیہ  و  آلہ  وسلم ہیں)کی  شہادت  سے  غافل  رہ  سکتے  ہیں؟وہ  کیونکر  اس  دلخراش  اور  المناک  سانحہ  پر  سوگووار  و  عزادار  نہ  ہوں؟امام  حسین  علیہ  السلام  کے  لئے  عزاداری  کی  مراسم  اور  مجالس  عزا  پیغمبر  اکرم  صلی  اللہ  علیہ  و  آلہ  وسلم کی  عترت  یعنی  اہلبیت  اطہار  علیہم  السلام  کے  بلند  مقام  اور  اہلبیت  رسول  علیہم  السلام  کے  دشمنوں  سے  اور اظہار براٴت کا  ایک  ذریعہ  ہے۔امام  حسین  علیہ  السلام  پر  اشک  بہانے  سے  دین  کے  دشمنوں  کے  خلاف  ہماری  قوت  میں  اضافہ  ہوتا  ہےاور  انسان  خود  کو  ان  مجالس  کے  ذریعہ  خون  حسین  علیہ  السلام  کے  انتقام  کے  لئے  تیار  کرسکتا  ہےاور  وہ  دن  دور  نہیں  کہ  جب  انشاء  اللہ  منتقم  خون  حسین  علیہ  السلام  کا  آئے  گااور  ہم  وقت  کے  امام  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کے  ساتھ  مل  کر  سید  الشہداء  سرور  شہیداں  حضرت  امام  حسین  علیہ  السلام  کے  خون  کا  انتقام  لیں  گے۔

ایک  اور  روایت  (کہ  جسے  تمام  شیعہ  و  سنی  علماء  نے  اپنی  کتابوں  میں  ذکر  کیا  ہے)میں  پیغمبر  اکرم  صلی  اللہ  علیہ  و  آلہ  وسلم  سے  نقل  ہوا  ہے  کہ  آپ  نے  فرمایا:

من مات و لم یعرف امام زمانه مات میتة جاهلیّة

جو  کو ئی  بھی  وقت  کے  امام  کی  معرفت  کے  بغیر  مر  جائے  گویا  وہ  جہالت  کی  موت  مرا۔

رسول  اکرم  کی  اس  حدیث  کی  روشنی  میں  ہمیں  وقت  کے  امام  کی  معرفت  ہونی  چاہئے  کہ  وقت  کے  امام  حضرت  امام  مہدی  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  ہیں  کہ  جن  کا  اسم  گرامی  شیعہ  اور  اہلسنت  سے  نقل  ہونے  والی  روایات  میں  موجود  ہے۔

امام  حسین  علیہ  السلام  کی  مجالس  میں  اشک  بہا  کر  ہم  وقت  کے  امام  حضرت  امام  مہدی  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کو  پرسہ  دیتے  ہیں  اور  خود  کومنتقم  آل  محمد  حضرت  امام  مہدی  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کے  پرچم  کے  زیر  سایہ  امام  حسین  علیہ  السلام  کے  خون  کا  انتقام  لینے  کے  لئے  تیار  کرتے  ہیں۔

جب  امام  زمانہ  حضرت  امام  مہدی  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کی  آفاقی  حکومت  کا  قیام  ہو  گا  اور  جب  روئے  زمین  پر  عدل  و  انصاف  کا  بول  بالا  ہو  گا  تو  اس  دن  دین  کے  دشمنوں  سے  انتقام  لیا  جائے  گا۔ہم  سب  کو  اس  پر  نور  زمانے  کی  جلد  آمد،مام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کے  ظہور  میں  تعجیل  اور  اسلام  و  مسلمین  کی  سربلندی  کی  دعا  کرنی  چاہئے  ۔خداوند  ہمیں  امام  حسین  علیہ  السلام  کے  فلسفہٴ  قیام  کو  سمجھنے  اور  حقیقی  معنوں  میں  حسینی  بننے  کی  توفیق  عطا  فرمائے  اور  ہمیں  امام  زمانہ  عجل  اللہ  فرجہ  الشریف  کے سپاہیوں  میں  سے  قرار  دے۔

_______________________________

یہ  بیان 16 دسمبر 2010 کو پاکستان  کے  مشہور  اخبار" روزنامۀ «پاکستان» شائع  ہوا.

 

بازدید : 4755
بازديد امروز : 2968
بازديد ديروز : 3004
بازديد کل : 87529380
بازديد کل : 68324513